What is Valentine’s Day? why is valentine’s day haram in Islam?

valentine’s day halal or haram in Islam,

Valentine’s Day, a celebration of love, often raises questions within the Islamic community. In this comprehensive guide, we explore whether Valentine’s Day is considered halal (permissible) or haram (forbidden) in Islam. Let’s navigate through diverse viewpoints, cultural nuances, and religious considerations.

 ویلنٹائن ڈے کیا ہے؟  ہم اس دن کو کیوں نہیں مناتے؟

  جنوری 2018 – 6 سال پہلے شائع ہوا۔

 انسان کی عفت اس کے کردار کی خوبصورتی ہے۔  ایک مسلمان اس وقت تک سچا مسلمان نہیں ہو سکتا جب تک کہ وہ اپنے آپ کو ہر قسم کی بے حیائی سے نہ بچا لے۔

  یہ اسلام کی سب سےنمایاں خصوصیت ہے کہ وہ اپنے ہر پیروکار کو ہر قسم کی بے حیائی سے دور رکھنا چاہتا ہے۔  قرآن پاک؛

 

قُلْ اِنَّمَا حَرَّمَ رَبِّیَ الْفَوَاحِشَ مَا ظَهَرَ مِنْهَا وَ مَا بَطَنَ وَ الْاِثْمَ وَ الْبَغْیَ بِغَیْرِ الْحَقِّ وَ اَنْ تُشْرِكُوْا بِاللّٰهِ

مَا لَمْ یُنَزِّلْ بِهٖ سُلْطٰنًا وَّ اَنْ تَقُوْلُوْا عَلَى اللّٰهِ مَا لَا تَعْلَمُوْنَ(۳۳)

••ترجمہ••

 کہہ دو کہ میرے رب نے تو صرف بے حیائی کو حرام کیا ہے، چاہے وہ ظاہر ہوں یا چھپے ہوں، اور گناہ اور ناحق سرکشی، اور اس بات کو کہ تم اللہ کے

ساتھ شریک ٹھہراؤ ان چیزوں کو جو نازل نہیں ہوئی، اس میں اختیار ہے، اور یہ کہ تم اللہ کے بارے میں وہ باتیں کہو جو تم نہیں جانتے

 valentine's day haram in Islam

پیارے اسلامی بھائیو! ویلنٹائن ڈے کا جشن بھی بے حیائی کی ترویج کا ایک قسم ہے جو کہ صرف ایک معاشرتی اور اخلاقی بنیاد کی تباہی کا سبب بنتا ہے۔

یہ دن فحاشی اور بے شرمی کے پیغام لے کر آتا ہے۔ ۔ حقیقت میں، بےایمانی کا زہر پھولوں کی ڈھیر کے نیچے چھپا ہوتا ہے اور بے ہودگی کا زہر چاکلیٹ کی

میٹھائی کے ذریعے چکھا جاتا ہے۔اگر ہم اس دن کے پورے جشن کا جائزہ لیں تو ہم کم از کم درج ذیل گناہوں کی بہت واضح طور پر نشاندہی کر سکتے ہیں۔

 ویلنٹائن ڈے میں کیا ہوتا ہے؟

ویلنٹائن ڈے پر لڑکے اور لڑکیاں اپنے غیر شرعی محبت کا اظہار کرنے کے لئے ایک دوسرے کو پھولوں، چاکلیٹس اور کاغذ کے دل وغیرہ کے تحفے بھیجتے ہیں۔

وہ مختلف جگہوں پر ملتے ہیں اور ایک دوسرے کے ساتھ وقتگزارتے ہیں۔ اس ملاقات کے دوران بہت سے معاملات میں وہ اکیلے ہوتے ہیں، اور اس صورت حال

میں کیا ہوتا ہے سب جانتے ہیں۔اگر ہم اس صورتحال کا اسلامی تعلیمات کے مطابق تجزیہ کریں تو ہمیں مندرجہ ذیل حرام اعمال کا پتہ چلتا ہے:

 غیر قانونی تعلقات کو مضبوط کرنے کے لیے تحائف کا تبادلہ۔

 لڑکا اور لڑکی کی غیر قانونی ملاقات۔

ان کا تنہائی میں اکٹھا ہونا۔

اور بہت سے معاملات میں جسمانی رابطہ (زنا اور زنا)۔

یہ ملاقات حیا کو ختم کر دیتی ہے اور انسان کو بے شرم بنا دیتی ہے۔

 آئیے اب شریعت سے یہ تعلقات پر مخصوص ہدایات حاصل کریں۔

 اسلام کی روشنی میں اس صورت میں تحائف کا تبادلہ حرام اور قبیح فعل ہے۔  یہ دونوں گنہگار ہیں اور یہ تحفے غلیظ مال ہیں۔  مزید یہ کہ یہ رشوت کی ایک

شکل ہے جس کا تبادلہ غیر قانونی تعلقات قائم کرنے کے لیے کیا جاتا ہے۔ ان دونوں گنہگاروں پر لازم ہے کہ وہ یہ تحفے واپس کر دیں اور سچی توبہ کریں۔

  جہاں تک لڑکا اور لڑکی کی ملاقات کا تعلق ہے تو یہ جائز نہیں ہے اور جب وہ تنہائی میں ملتے ہیں تو یہ زیادہ شرمناک کام بن جاتا ہے کیونکہ اس صورت میں

شیطان بھی تیسرا شخص بن کر آتا ہے جو انہیں حرام کی ترغیب دیتا ہے اور

وہ زنا کا ارتکاب کرتے ہیں۔ زنا)۔  اس صورت حال کو بیان کرنے والی ایک حدیث کہتی ہے؛  “کوئی مرد عورت کے ساتھ تنہا نہیں ہوتا لیکن شیطان

تیسرا موجود ہوتا ہے۔”

 شرعی وجہ کے بغیر کسی غیر محرم سے کسی بھی شکل میں جسمانی رابطہ حرام اور گناہ ہے۔  یہاں تک کہ اس صورت میں غیر محرم کو دیکھنا بھی زنا ہے۔

  ایک حدیثمیں ہے کہ شہوت بھری نگاہڈالنا آنکھوں کا زنا ہے۔  ایک ا حدیث میں ہے کہ جس نے اپنی آنکھوں سے حرام کیا، قیامت کے دن اس کی

آنکھیں جہنم کی آگ سےبھری جائیں گی۔ کچھ کتابوں میں لکھا ہے۔  زنا سے بچو، کیونکہ اس کے چھ اثرات ہیں۔  ان تینوں میں سے دنیا میں تجربہ کار ہیں

اور باقی تین آخرت میں۔

Valentine’s day haram islam urdu translation

valentine's day haram in Islam

.. اس دنیا میں تین تجربہ کار ہیں

بڑوں کے چہروں سے نور غائب ہو جاتا ہے۔

یہ غربت اور قحط لاتا ہے۔

عمر کم ہو جاتی ہے۔

 آخرت میں تجربہ کرنے والے تین ہیں

خدا تعالی بالغوں کو اپنے غضب سے مخاطب کرتا ہے۔

قیامت کے دن ان کا کڑا حساب لیا جائے گا۔

انہیں جہنم میں ڈالا جائے گا۔

 امام شافعی رحمۃ اللہ علیہ نے زنا کے نتائج کو اشعار کی صورت میں بیان کرتے ہوئے بدقسمت گنہگار کو درج ذیل اشعار سے ملامت کی ہے

إنَّ الزِّنا دَينٌ إذا أقرضتًه

كان الوفا مِن أهلِ بيتِك فاعلمِ

لو كنتَ حرًّا مِن سُلالةِ ماجدٍ

ما كنتَ هتَّاكًا لحرمةِ مُسلمِ

ترجمہ: بے شک زنا قرض کی ایک قسم ہے جو تمہارے گھر کی عورتوں کو ادا کرنا ہے۔  اے زانی

اگر تو ایک اعلیٰ کردار والا اور شریف  نسب کا آدمی ہوتا تو کبھی دوسرے مسلمان کی عزت کو برباد نہ کرتا۔

اے گناہ کار! آپ کو امام شافعی رحمۃ اللہ علیہ کے کلام پر ضرور توجہ دیں۔، انہوں نے کہا ہے: “یہ ایک قرض ہے جو آپ کے گھرانے سے کسی کو ادا کرنا ہے،

یعنی آپ کی بیوی یا بہن یا بیٹی۔اللہ تعالی ہماری حفاظت   کرے۔

ایک حدیث یہ بات کافی ہے کہ بتائے کہ ایک مسلمان جو اپنی حیا کھوتا ہے، اُس پر کیا واقع ہوتا ہے۔

“یقیناً ایمان اور حیا ایک ساتھ رہتے ہیں۔ جب بھی ان میں سے کوئی چلا جاتا ہے، تو دوسرا بھی جاتا ہے۔”

پیارے اسلامی بھائیو!  جو کچھ ذکر کیا گیا ہے وہ ہمیں اس قسم کے دن منانے کے نتائج دکھانے کے لیے کافی ہے۔  ایک مسلمان ہونے کے ناطے یہ ہماری

ذمہ داری ہے کہ ہم نہ صرف خود اسبرے جشن سے باز رہیں بلکہ دوسروں کو بھی اس فحاشی کو چھوڑنے کا ذہن بنائیں۔  براہ کرم اس بلاگ کو دوسروں کے ساتھ شیئر کریں۔

  براہ کرم ہماری ویب سائٹ ضرور وزٹ کریں۔

is valentine’s day haram

valentine's day haram in Islam
valentine’s day haram in Islam

Leave a Comment